ﻋﻠﯽ ﺟﻤﺎﻝِ ﺩﻭ ﻋﺎﻟﻢ ﻋﻠﯽ ﺍﻣﺎﻡ ﺯﻣﻦ

ﻋﻠﯽ ﺟﻤﺎﻝِ ﺩﻭ ﻋﺎﻟﻢ ﻋﻠﯽ ﺍﻣﺎﻡ ﺯﻣﻦ
ﻋﻠﯽ ﻭﻗﺎﺭِ ﺩﻝ ﻭ ﺟﺎﮞ ﻋﻠﯽ ﺑﮩﺎﺭِ ﭼﻤﻦ
ﻋﻠﯽ ﻋﺮﻭﺝِ ﻓﺼﺎﺣﺖ ﻋﻠﯽ ﮐﻤﺎﻝِ ﺳﺨﻦ
ﻋﻠﯽ ﻋﺮﺏ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺣﻖ ﮐی ﭘﮩﻠﯽ ﮐﺮﻥ

ﻋﻠﯽ ﻭﻟﯽ ﺳﮯ ﮔﺮﯾﺰﺍﮞ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
ﻋﻠﯽ ﺗﻮ ﻗﻮّﺕِ ﺑﺎﺯُﻭ ﮨﮯ ﻣﺼﻄﻔﮯ ﺹ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
ﻋﻠﯽ ﻉ ﮐﺎ ﻧﻄﻖ ” ﺳَﻠُﻮﻧﯽ ” ﮐﮯ ﺁﺑﺸﺎﺭ ﮐﯽ ﺿﻮ
ﻋﻠﯽ ﮐﺎ ﺣﺴﻦ ﻣﮧ ﻭﻣﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﯽ ﺭﻭ
ﻋﻠﯽ ﮨﻨﺴﮯ ﺗﻮ ﭘﮭﻮﭨﮯ ﺩﻭ ﺟﮩﺎﮞ ﻣﯿﮟ ﺻﺒﺢ ﮐﯽ ﭘﻮ
ﻋﻠﯽ ﺟﻮ ﭼﭗ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﮎ ﺟﺎﺋﮯ ﻧﺒﺾِ ﻋﺎﻟﻢ ﻧﻮ

ﻋﻠﯽ ﺭُﮐﮯ ﺗﻮ ﻧﻮﺍ ﺧﺎﻣﺸﯽ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻠﺘﯽ ﮨﮯ
ﻋﻠﯽ ﭼﻠﮯ ﺗﻮ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺳﺎﻧﺲ ﭼﻠﺘﯽ ﮨﮯ

علی کا فکر شعورِ حیاتِ نو کی اساس
علی کا فقر جہاں میں تونگری کا لباس
علی کا علم دلِ آگہی شکستِ قیاس
علی کا حلم کرم گستری میں عدل شناس

بھٹک رہے ہو کہاں عاقبت گری کے لیے؟
علی کا نام ہی کافی ہے رہبری کے لیے

علی ضمیرِ جنون میرِ کاروانِ خرد
علی شعورِ امامت علی غرورِ صمد
علی امینِ رموزِ رسول و فکرِ احَد
علی دلیر بہادر سخی کریم اسد

علی کے ذکر سے جنت وصول ہوتی ہے
بغیر اس کے دعا کب قبول ہوتی ہے

علی ہے منزل ادراک وآگہی کا نشان
علی ہے رونقِ ہنگامہ زمان ومکان
علی کے دم سے دما دم رواں دواں
یہ جہاں
علی کے دستِ کرم کی کِرن کراں بہ کراں

اگر نجات کے طالب ہو تُم اَبد کے لیے
کبھی پکار کے دیکھو اسے مدد کے لیے

(محسن نقوی شہید)

طالب دعا: عمران رشید

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: