کورونا کی پانچویں لہر مزید خطرناک، 32 مریض جاں بحق

اسلام آباد (جے ٹی این پی کے) کورونا کی پانچویں لہر مزید خطرناک

پاکستان میں کرونا وائرس کے باعث مزید 32مریض چل بسے ، 5327نئے کیسز رپورٹ ہوئے۔نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) کے اعداد و شمار کے مطابق پاکستان میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے مزید 5 ہزار 327 کیسز سامنے آئے ہیں،

مزید 32 مریض اس موذی وباء کے سامنے زندگی کی بازی ہار گئے، مزید 3 ہزار 665 مریض شفایاب ہو گئے۔پاکستان بھر میں اب تک 29 ہزار 301 کورونا وائرس کے مریض انتقال کر چکے ہیں ،اس کے کْل مریضوں کی تعداد 14 لاکھ 30 ہزار 366 ہو چکی ہے۔

ملک بھر میں ہسپتالوں، قرنطینہ سینٹرز، وینٹی لیٹرز اور گھروں میں کورونا وائرس کے 1 لاکھ 5 ہزار 675 زیرِ علاج مریضوں میں سے 1 ہزار 500 کی حالت تشویش ناک ہے، 12 لاکھ 95 ہزار 390 مریض اب تک اس بیماری سے شفایاب ہو چکے ہیں۔

گزشتہ 24 گھنٹوں میں ملک میں کورونا وائرس کے مزید 55 ہزار 202 ٹیسٹ کیئے گئے، اب تک کْل 2 کروڑ 50 لاکھ 73 ہزار 585 کورونا ٹیسٹ کیئے جا چکے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:حوثی باغیوں کا ابو ظہبی ایئر پورٹ پر ڈرون حملہ، پاکستانی سمیت 3 افراد ہلاک

سندھ میں کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد دیگر صوبوں سے زیادہ 5 لاکھ 43 ہزار 170 ہو چکی ہے، اس سے کْل اموات 7 ہزار 829 ہو گئیں۔

پنجاب میں کورونا وائرس کے اب تک 4 لاکھ 80 ہزار 421 مریض پورٹ ہوئے ہیں، یہاں کْل ہلاکتیں دیگر صوبوں سے زیادہ ہیں جو 13 ہزار 176 ہو چکی ہیں۔

خیبر پختون خوا میں کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد 1 لاکھ 94 ہزار 887 ہو چکی ہے، اس سے یہاں کْل اموات 6 ہزار 2 ہو گئیں۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں 1 لاکھ 28 ہزار 429 کورونا وائرس سے متاثرہ مریض اب تک سامنے آئے ہیں، اب تک یہاں کْل 980 افراد اس وبائ سے جان کی بازی ہار چکے ہیں۔

آزاد جموں و کشمیر میں کورونا وائرس کے اب ک 38 ہزار 339 مریض رپورٹ ہوئے ہیں، اس کے باعث اب تک یہاں کْل 758 مریض وفات پا چکے ہیں۔

کورونا وائرس کے بلوچستان میں 34 ہزار 417 مریض اب تک رپورٹ ہوئے ہیں جہاں 368 افراد اس مرض سے انتقال کر چکے ہیں۔

گِلگت بلتستان میں 10 ہزار 703 کورونا وائرس کے مریض سامنے آئے ہیں جبکہ اس سے اب تک 188 افراد جاں بحق ہوئے ہیں۔

کورونا کی پانچویں لہر مزید خطرناک

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: