کربلا کا حیات بخش ہونا، حُب ّ الحسينؑ

جرنل ٹیلی نیٹ ورک خصوصی ایڈیشن / کربلا کا حیات بخش


کسی نے کہا تھا کہ نا جانے یہ لوگ حسین ؑ چاہتے کیا ہیں ، انسان جب تک حسینی نہ ہو وہ نہیں جانتا کہ وہ حسین ؑ سے کيا چاہتے ہيں، اور حسینی بھی اپنا راز نامحرموں کو نہیں بتاتا، نامحرم کا کان پیغام سروش کے لئے نہیں ہے۔ زمینی سفر میں پیر زخمی ہو جاتے ہیں اور آسمانی سفر ميں دل۔ جو دل یاد حسين ؑ میں نہ روئے بے شک وہ دل نہیں ہے، سخت اور بے لچک پتھر ہے اور نور کیونکر سخت پتھر پر اثر کر سکے گا ؟ ہم امام حسين (ع) سے کیا چاہتے ہیں ؟ ہمارے اور امام حسين ؑکے درميان کونسا راز ہے؟،

مقام حب الحسينؑ


کیا آ پ نے کبھی اس راز کے بارے میں سوچا ہے؟ ہم امام حسين علیہ السلام سے کیا چاہتے ہيں؟

ہمارے اور امام حسينؑ کے درميان کیا راز ہے ؟ ہمارے عقیدے میں حب الحسينؑ کا مقام کیا ہے؟

امام جعفر صادق علیہ السلام سے پوچھا گیا تو آپ ؑ نے جواب دیا کیا دین حب و بغض کے سوا

کسی اور چیز کا نام ہے؟،

یہ جواب انکاری ستفہام کي صورت میں دوستيوں اور دشمنيوں کی اہمیت کی مقدار بتانا چاہتا ہے،

حتیٰ کہ دین کو حب و بغض اور دوستيوں اور دشمنيوں کا مجموعہ قرار ديتا ہے۔ اگر محبت سچی ہوتو

وہ محب کو محبوب کی قربت عطاکرتی ہے اور اسکے اخلاق اورعادات و اطوار کو محبوب کے اخلاق

کے مشابہ بنا دیتی ہے۔

چونکہ حب اور جذبات کا تعلق عقل و منطق کی نسبت دل سے قریب تر ہے، عقلی منفعتوں منجملہ

ضروریات اور لوازمات دین کو متأثر کرسکتا ہے يا ان کو تقويت پہنچا سکتا يا پھر انہیں کمزورکرسکتا ہے

چنانچہ ہميں صراط مستقيم پراستوار رکھنے کیلئے دوستيوں اوردشمنيوں میں بھی احتیاط برتنی پڑتی

ہے اور حب و بغض کے اثرات کو ملحوظ خاطر رکھنا پڑ تا ہے، عين ممکن ہے کہ ایک چھوٹی سی غلطی

عظیم ترین نقصانات کا سبب بنے اور قيامت کے دن ہماری صدائیں آسمان تک پہنچيں، کسی چيز سے

محبت اپنے پاس عطررکھنے کی مانند ہے، ہم چاہیں یا نہ چاہیں اسکی خوشبو محسوس اور اس کا اثر

ہمارے اوپر مرتب ہوتا ہے ۔

گفتار اور کردار / ھم اور ھماری حقیقت ۔۔؟

چنانچہ ہمارے اعمال و افعال اس ذات کے اعمال سے مطابقت نہ رکھتے ہوں اوراسی کے اعمال کے تسلسل

ميں انجام نہ پاہیں ہميں جان لینا چاہئے کہ ہماري محبت ہماري زبان و بیان کی حد سے تجاوز نہیں کرسکی ہے

اور در حقیقت اپنے آپ سے جھوٹ بول رہے ہیں۔

امامؑ سے محبت کے اثرات و برکات

اباعبداللہ ؑ کی محبت کے اثرات و برکات بہت زيادہ ہیں اور جتنی یہ محبت صادقانہ اور سچی ہو گی

اور اسکی جڑیں جتنی گہری ہوں کی اس کے مواہب اور برکات بھی زيادہ ہی ہونگی، اصولی طور پر

تمام معصو مین ؑ کی محبت اسی خا صیت کی حامل ہے۔ اہل بیت ؑکے مقام ر فیع کی معرفت کی

سطح بلند کرکے ہم اپنی محبت کی گہرائی اورعمق میں بھی اضافہ کرسکتے ہیں اور اس کو زیادہ

سے زیادہ وسعت دے سکتے ہیں اور اس محبت کی کثیر برکتوں سے بہرہ مند ہوسکتے ہیں ۔ ،

جاری ہے ۔۔۔، اگلا حصہ” آئینۂ حسینیت ” پڑھنے کیلئے ھمارے ساتھ جڑے رہیں۔

قارئین ===> ہماری کاوش اچھی لگے تو شیئر، اپ ڈیٹ رہنے کیلئے (== فالو == ) کریں، مزید بہتری کیلئے اپنی قیمتی آرا سے بھی ضرور نوازیں،شکریہ جتن نیوز اردو انتظامیہ

کربلا کا حیات بخش

مزید تجزیئے ، فیچرز ، کالمز ، بلاگز اور تبصرے ( == پڑھیں == )

Imran Rasheed

عمران رشید خان صوبہ خیبر پختونخوا کے سینئر صحافی اور سٹوری رائٹر/تجزیہ کار ہیں۔ کرائمز ، تحقیقاتی رپورٹنگ ، افغان امور اور سماجی مسائل پر کافی عبور رکھتے ہیں ، اس وقت جے ٹی این پی کے اردو کیساتھ بحیثیت بیورو چیف خیبر پختونخوا فرائض انجام دے رہے ہیں ۔ ادارہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: