کربلا اور انسانی اقدار

کربلا اور انسانی اقدار


امام حسین علیہ السلام اور آپ کے اصحاب خیر و برکت کا استعارہ ٹھہرے کیونکہ آپ نے انسانی اقدار کی پامالی برداشت نہیں کی اور یزیدیوں کے پاؤں تلے روندے گئے اقدار کے احیا کے لیے اپنا سب کچھ قربان کردیا۔

تاریخ بشریت میں لاکھوں، ہزاروں واقعات آئے روز رونما ہوتے رہتے ہیں

کچھ تو روز اول سے ہی لوگوں کے قرطاس ذہن سے محو ہوجاتے ہیں تو بعض حوادث مختصر مدت کے بعد اپنی موت آپ مرجاتے ہیں لیکن کربلا کا جانگداز واقعہ اپنے وقوع کے چودہ سو سال پشت سر گزارنے کے باوجود اپنی پوری طاقت اور آب و تاب کے ساتھ تازہ تر ہوتا جارہا ہے

کیونکہ یزید اور اس کے کارندے شر و فساد کے نمائندے تھے اور انہوں نے اپنے زعم باطل میں خیر کے چھوٹے سے کاروان کو لق و دق، بے آب و گیاہ تپتی صحرا میں محاصرہ کر کے شہید کردیا اور پھر اپنی پوری قوت لگا کر اس واقعے کو چھپانا چاہا۔

کسی معروف شہر یا علاقے میں کاروان کربلا کو روکا نہیں بلکہ شہروں اور عوام کی نظروں سے اوجھل صحرا میں نہایت خاموشی سے اصحاب حق کا قتل عام کیا ہے۔

لیکن اللہ اور اللہ والوں کے عزم راسخ کے سامنے یزید اور یزیدی لشکر کا کچھ نہ چل سکا

امام علیہ السلام اور آپ کے اصحاب نے میدان کربلا میں شر کے لشکر کا ایسا تاریخی محاصرہ کیا کہ قیامت تک کے لیے ہر ظالم کا سیاہ چہرہ بے نقاب ہوا، اقوام عالم کے نزدیک یزید اور یزیدیوں کے نام گالی بن کے رہ گئے جبکہ امام حسین علیہ السلام اور آپ کے اصحاب خیر و برکت کا استعارہ ٹھہرے کیونکہ آپ نے انسانی اقدار کی پامالی برداشت نہیں کی اور یزیدیوں کے پاؤں تلے روندے گئے اقدار کے احیا کے لیے اپنا سب کچھ قربان کردیا۔

انسانی اقدار چونکہ جاودانی اور ابدی ہیں

ہر انسان ان صفات و کمال کے حصول کے لیے تگ و دو کرتا ہے۔

اس میں مذہب ، نسل و رنگ کا کوئی دخل نہیں بلکہ ہرانسان حریت و آزادی،

عزت و وقار، جرات و غیرت، شرافت و کرامت، محبت و الفت، علم و حکمت،

معنویت و روحانیت، تفکر و تدبر، ایثار و فدا کاری کا متلاشی ہے،

اور جب ان تمام صفات کو سرکار امام حسین علیہ السلام اور آپ کے باوفا اصحاب کے وجود مقدس میں

کامل و اکمل انداز میں دیکھتے ہیں تو ان کا عاشق و دیوانہ بن جاتے ہیں اور

اقدارانسانی کےفتوحات کا سلسلہ بدستور جاری و ساری ہے اور اس کاروان نے اپنا ارتقائی سفر جاری رکھا ہوا ہے۔

یہاں تک کہ منتقم خون سیدالشھداء علیہ السلام، امام زمان عجل اللہ فرجہ الشریف ظہور فرماکر ظلم و ستم

کی گرتی دیوار کو ڈھانے کے لیے ذوالفقار حیدری کے ساتھ قیام کریں گے اور دنیا کو عدل و انصاف سے بھر دیں گے اور ظالموں کا قلع قمع کر کے ان کی تخت الٹ دیں گے۔

قارئین ===> ہماری کاوش اچھی لگے تو شیئر، اپ ڈیٹ رہنے کیلئے (== فالو == ) کریں، مزید بہتری کیلئے اپنی قیمتی آرا سے بھی ضرور نوازیں،شکریہ جتن نیوز اردو انتظامیہ

کربلا اور انسانی اقدار

مزید تجزیئے ، فیچرز ، کالمز ، بلاگز اور تبصرے ( == پڑھیں == )

Imran Rasheed

عمران رشید خان صوبہ خیبر پختونخوا کے سینئر صحافی اور سٹوری رائٹر/تجزیہ کار ہیں۔ کرائمز ، تحقیقاتی رپورٹنگ ، افغان امور اور سماجی مسائل پر کافی عبور رکھتے ہیں ، اس وقت جے ٹی این پی کے اردو کیساتھ بحیثیت بیورو چیف خیبر پختونخوا فرائض انجام دے رہے ہیں ۔ ادارہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: