ریکارڈ ٹیکس جمع ہونے کے باعث پٹرول، ڈیزل،بجلی کی قیمتیں کم کیں، عمران خان

اسلام آ باد (جے ٹی این پی کے) پٹرول بجلی کی قیمتیں کم کیں

وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ایف بی آر نے پاکستان کی تاریخ کا ریکارڈ ٹیکس جمع کیا ہے،

ہمارے پاس جتنے پیسے آئیں گے ہم غریبوں پر خرچ کریں گے،

دنیا میں تیل اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ ہو رہا ہے،

ریاست کو اپنے کمزور طبقے کی ذمہ داری لینی چاہیے ،

نظریہ پاکستان پر عمل نہ ہونے کی وجہ آگے نہیں بڑھ سکے،

طاقتور کو معافی اور کمزور کو سزا دینے والا معاشرہ ختم ہو جاتا ہے،

جس قوم میں انصاف نہ ہوتا ہو تباہ ہو جاتی ہے ۔

اسلام آباد میں بلاسود قرضوں کے اجرا کی تقریب سے خطاب میں وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ

پاکستان ایک بڑے خواب کا نام تھا، ہم نے ایک مثالی اسلامی فلاحی ریاست بننا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں پاکستان کو ریاست مدینہ کے اصولوں پر کھڑا کرنا تھا،

مجھے افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ 1947 میں جو ہمارا قبلہ تھا ہم اس راستے پر نہیں چلے

جس کی وجہ سے پاکستان کو وہ عزت اور مقام نہیں ملا جو ہمیں ملنا چاہیے تھا۔

یہ بھی پڑھیں : اوگرا نےعوام پرگیس بم گرا دیا

وزیر اعظم نے کہا کہ جو قوم اپنے نظریے سے ہٹتی ہے وہ کبھی کامیاب نہیں ہوتی

اور ہمارا نظریہ ریاست مدینہ کا نظریہ تھا جس میں دو اہم چیزیں تھی

ایک انسانیت اور دوسرا انصاف، نبیﷺ کا حکم کہ جس قوم میں انصاف نہیں ہوتا وہ تباہ ہوجاتی ہے

یعنی قانون سے بلاتر کوئی نہیں ہونا چاہیے۔

آج مجھے افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ مدینہ کی ریاست کے اصولوں پر غیر مسلم قومیں عمل درآمد کر رہی ہیں۔

وزیر اعظم نے رحمت العالمین اتھارٹی کے آغاز کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ اس کا مقصد ہے کہ

ہمیں اپنے بچے بچے کو بتانا ہے کہ نبیﷺ کا پیغام کیا تھا۔

عمران خان نے ایف بی آر کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے کہا کہ ہم نے پاکستان کی تاریخ میں پہلی

بار اتنا ٹیکس اکھٹا کیا ہے اور اس ہی وجہ سے میں نے پرسوں ریلیف کا اعلان کیا ہے،

جبکہ دنیا میں توانائی اور تیل کی قیمت میں اضافہ ہوا ہے، اور ہم عوام کو ریلیف فراہم کر رہے ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ہم جتنا پیسہ جمع کریں اسے اپنے غریب لوگوں پر لگائیں گے۔

بلاسود قرضوں کے حوالے انہوں نے کہا کہ یہ پروگرام ابتدائی طور پر کچھ صوبوں میں شروع کیا تھا

اب یہ پروگرام ملک بھر میں لا رہے ہیں۔

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

انہوں نے پروگرام کے منتظم ڈاکٹر امجد کی کوششوں کو سراہتے ہوئے کہا کہ آپ نے زندگی کا مقصد

سمجھا کہ اﷲ آخرت میں اس کو نوازتا ہے جو دنیا میں لوگوں کی مدد کرتا ہے۔

پروگرام سے متعلق بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہمارے 45 لاکھ خاندان غریب ہیں،

اس پروگرام کے ذریعے شہری علاقوں میں رہنے والوں کو 5 لاکھ روپے بلا سود قرضہ

جبکہ دیہی علاقوں میں کھیتی باڈی کے لیے ساڑھے 3 لاکھ روپے قرضہ دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ وہ شہری جو اپنا گھر بنانا چاہتے ہیں انہیں 20 لاکھ روپے دیے جائیں گے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ خاندان کے ایک فرد کو ٹیکنکل ایجوکیشن دی جائے گی تاکہ وہ ہنر سیکھیں

تاکہ وہ اپنے لیے کما سکے، اب انفارمیشن ٹیکنالوجی ایسا شعبہ بن گیا ہے جس کے ذریعے آپ

ایک بچے کو بھی 6 ماہ سے سال میں ٹرین کر سکتے ہیں۔

اب تک ہم ڈھائی روپے تک کی رقم بلاسود قرضوں کی مد میں عوام کو دے چکے ہیں،

آنے والے وقتوں میں ہم مزید ایک ہزار ارب روپے کے قرضے دینے جارہے ہیں،

پٹرول بجلی کی قیمتیں کم کیں

 

 


جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: