سزائے موت کے قیدی شاہ رخ جتوئی کانجی ہسپتال میں شاہانہ زندگی گزارنے کا انکشاف

سزائے موت کے قیدی شاہ رخ جتوئی

کراچی (جے ٹی این پی کے) شاہ زیب خان قتل کے مرکزی مجرم شاہ رخ جتوئی

سینٹرل جیل کراچی کے بجائے گزری میں واقعے نجی اسپتال کی بالائی منزل پر

شاہانہ زندگی گزار رہا ہے۔ شاہ رخ جتوئی سے متعلق یہ اہم انکشاف سامنے آیا ہے

کہ ملزم کئی ماہ سے جیل کے بجائے کراچی کے ایک نجی اسپتال میں رہ رہا ہے،

اسپتال شاہ رخ جتوئی کے خاندان نے کرائے پر حاصل کر رکھا ہے محکمہ داخلہ

کے مطابق ملزم کو محکمہ داخلہ سندھ کے حکم پر جیل سے نجی ہسپتال میں منتقل

کیا گیا تھا جہاں وہ اب شاہانہ زندگی گزار رہا ہے۔ذرائع کا بتانا ہے کہ شاہ رخ

جتوئی کی جیل سے نجی اسپتال منتقلی کے پیچھے سندھ کی اعلی شخصیت کا ہاتھ

ہے۔عدالت سے سزا ملنے کے بعد شاہ رخ جتوئی سزا یافتہ مجرم ہے اور قیدی کے

بجائے عام انسانوں والی زندگی گزار رہا ہے۔نجی اسپتال شاہ رخ جتوئی کی رہائش

کے لیے ایک بنگلے میں بنایا گیا۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اسپتال کی بنیاد شاہ رخ

جتوئی کے والد نے رکھی تھی اور نجی اسپتال شاہ رخ جتوئی کی رہائش کے لیے

ایک بنگلے میں بنایا گیا ہے۔ذرائع کے مطابق شاہ رخ جتوئی اسپتال کی پہلی منزل

پر تمام سہولتوں کے ساتھ رہائش پذیر ہے، جہاں ان کے دوست بھی ملنے آتے ہیں

جبکہ شاہ رخ جتوئی کی سیکورٹی کے لئے الگ سے اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔

واضح رہے کہ 25 دسمبر 2012 کو مقتول شاہ زیب خان کی بہن کے ساتھ شاہ رخ

جتوئی اور اس کے دوست غلام مرتضی لاشاری کی جانب سے بدسلوکی کی گئی

جس پر شاہ زیب مشتعل ہو کر ملزمان سے لڑ پڑا، موقع کے وقت معاملے کو رفع

دفع کردیا گیا تاہم شاہ رخ جتوئی نے دوستوں کے ساتھ شاہ زیب کی گاڑی پر

فائرنگ کر کے اسے قتل کردیا تھا۔واقعے کے بعدشاہ رخ دبئی فرار ہوگیا، تفتیش

سست روی کا شکار رہی، بالآخرمجرم گرفتار ہوا اور مقدمہ انسداد دہشت گردی

عدالت میں چلا۔7جون 2013 کو قتل کا جرم ثابت ہونے پر شاہ رخ جتوئی اور

سراج تالپور کو سزائے موت جبکہ سجاد تالپور اور غلام مرتضی لاشاری کو عمر

قید کی سزا سنائی گئی تھی۔ دوسری طرف محکمہ صحت سندھ شاہ زیب قتل کیس

کے مرکزی ملزم شاہ رخ جتوئی کی نجی اسپتال منتقلی کے معاملے سے لاعلم

نکلا۔ذرائع کے مطابق شاہ رخ جتوئی کی نجی اسپتال منتقلی کے لیے محکمہ

صحت سے کوئی رابطہ نہیں کیا گیا، اور ملزم کو میڈیکل بورڈ کے بغیر ہی نجی

اسپتال منتقل کیا گیا ہے۔محکمہ صحت کے ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ صحت کو

جیل یا محکمہ داخلہ کی جانب سے کوئی خط نہیں ملا ۔

سزائے موت کے قیدی شاہ رخ جتوئی

رکی پونٹنگ انگلینڈ کے کپتان جو روٹ پر برس پڑے

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: