سانحہ مری،15انتظامی افسرعہدوں سے فارغ انضباطی کارروائی بھی ہو گی ، وزیر اعلیٰ پنجاب

سانحہ مری15 انتظامی افسر فارغ

لاہور (جے ٹی این پی کے) وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے سانحہ مری کی تحقیقات مکمل

ہونے کے بعد اے سی مری سی پی او ڈپٹی کمشنر اورسی ٹی او راولپنڈی سمیت 15انتظامی افسروں

انکے عہدوں سے ہٹا دیا ۔خیال رہے کہ 9 جنوری کو سیاحتی مقام مری میں شدید برف باری کے

باعث ہزاروں افراد سڑکوں پر پھنس کر رہ گئے تھے اور اس دوران شدید سردی اور گاڑیوں میں

دم گھٹنے سے 23 سیاح زندگی کی بازی ہار گئے تھے۔ واقعے کے بعد پنجاب حکومت نے تحقیقات

کے لیے تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دی تھی جس کی رپورٹ وزیراعلیٰ کو پیش کی گئی ہے۔۔ پریس

کانفرنس کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدارنے کہا کہ سانحہ مری بہت بڑا واقعہ ہے،

انکوائری رپورٹ کے مطابق غفلت، کوتاہیوں کی نشاندہی کی گئی۔ قوم سے سانحہ مری کے ذمہ

داروں کے خلاف کارروائی کا وعدہ کیا تھا۔ قوم سے کیا گیا اپنا وعدہ پورا کردیا۔وزیر اعلی پنجاب کا

کہنا تھاکہ کمشنر راولپنڈی ڈویڑن کو عہدے سے ہٹاکر وفاقی حکومت بھیج دیاگیا ہے اور معطل کرنے

کی سفارش بھی کی گئی ڈپٹی کمشنر راولپنڈی کو عہدے سے ہٹا کر خدمات وفاقی حکومت کے

سپرد،معطل کرنے اورانضباطی کارروائی کی سفارش کی گئی ہے اے سی مری کوبھی معطل

کردیاگیا اورانضباطی کارروائی بھی کی جائے گی۔ان کا کہنا تھا کہ سی پی او راولپنڈی اوراے ایس پی

مری کو عہدے سے ہٹا کرخدمات وفاقی حکومت کے سپرد، معطلی اورانضباطی کارروائی کی

سفارشات کی گئی ہیں سی ٹی او راولپنڈی،ڈی ایس پی ٹریفک اورایس ای ہائی ویز سرکل ٹو راولپنڈی

معطل،انضباطی کارروائی بھی ہوگی ایکسین ہائی راولپنڈی،ایکسین ہائی وے میکینکل،ایس ڈی او ہائی

وے میکینکل کو بھی معطل کردیاگیا۔وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدارکا مزید کہنا تھا کہ ڈسٹرکٹ

ایمرجنسی آفیسر مری،انچار ج مری ریسکیو 1122،ڈویڑنل فارسٹ آفیسر بھی معطل،انضباطی

کارروائی کا سامنا کرنا ہوگاڈائریکٹر پی ڈی ایم اے پنجاب کو معطل کر کے انضباطی کارروائی کا

حکم دے دیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ کمیٹی نے پس پردہ حقائق کا جائزہ لیا، متعلقہ افسران اپنے فرائض

انجام دینے سے قاصر رہے، افسران کوہٹا کر ان کے خلاف انضباطی کارروائی کی ہدایت کر دی گئی

ہے۔ عثمان بزدار کا کہنا تھا کہ اس کمیٹی نے بڑی عرق ریزی سے اس سانحہ کی رپورٹ مرتب کی

اور پس پردہ حقائق کا جائزہ لیا۔ انکوائری رپورٹ کے مطابق غفلت اور کوتاہیوں کی نشاندہی کی گئی۔

متعلقہ حکام اپنے فرائض اور رسک کا ادراک کرنے سے قاصر رہے۔ ۔سانحہ مری کی رپورٹ میں

انکشاف ہوا ہے کہ افسران واٹس ایپ پر چلتے رہے اور صورتحال کو سمجھ ہی نہ سکے۔سانحہ مری

کی تحقیقاتی ٹیم نے رپورٹ وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کو پیش کر دی گئی ہے۔ رپورٹ کے

مطابق تمام متعلقہ محکمو ں کی غفلت ثابت ہوئی ہے۔تحقیقات میں انکشاف ہوا ہے کہ افسران واٹس ایپ

پر چلتے رہے اور صورتحال کو سمجھ ہی نہ سکے۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ افسران نے صورتحال

کوسنجیدہ لیا نہ کسی پلان پرعمل کیا جبکہ کئی افسران نے واٹس ایپ میسج بھی تاخیر سے دیکھے۔

سی پی او، سی ٹی او بھی ذمے داری پوری کرنے میں ناکام رہے جبکہ محکمہ جنگلات اور ریسکیو

1122 کا مقامی آفس بھی ڈلیور نہ کرسکا اور ہائی وے محکمہ بھی ذمیداری ادا کرنے میں ناکام رہا۔

سانحہ مری15 انتظامی افسر فارغ

رکی پونٹنگ انگلینڈ کے کپتان جو روٹ پر برس پڑے

قارئین : ہماری کاوش پسند آئے تو شیئر ، اپڈیٹ رہنے کیلئے فالو کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

%d bloggers like this: